راحت اندوری

‏ہاتھ خالی ہیں ترے شہر سے جاتے جاتے
جان ہوتی تو مری جان لٹاتے جاتے

اب تو ہر ہاتھ کا پتھر ہمیں پہچانتا ہے
عمر گزری ہے ترے شہر میں آتے جاتے

اب کے مایوس ہوا یاروں کو رخصت کر کے
جا رہے تھے تو کوئی زخم لگاتے جاتے

رینگنے کی بھی اجازت نہیں ہم کو ورنہ
ہم جدھر جاتے نئے پھول کھلاتے جاتے

میں تو جلتے ہوئے صحراؤں کا اک پتھر تھا
تم تو دریا تھے مری پیاس بجھاتے جاتے

مجھ کو رونے کا سلیقہ بھی نہیں ہے شاید
لوگ ہنستے ہیں مجھے دیکھ کے آتے جاتے

ہم سے پہلے بھی مسافر کئی گزرے ہوں گے
کم سے کم راہ کے پتھر تو ہٹاتے جاتے

4 تبصرے “راحت اندوری

  1. Wow, incredible blog layout! How lengthy have you been blogging for? you make blogging glance easy. The overall glance of your website is wonderful, let alone the content material! You can see similar: sklep online and here ecommerce

  2. Hey There. I found your weblog the usage of msn. This is a very neatly written article. I’ll make sure to bookmark it and come back to read more of your useful info. Thank you for the post. I’ll definitely comeback. I saw similar here: sklep internetowy and also here: sklep online

  3. It’s perfect time to make some plans for the future and it is time to be happy. I’ve read this post and if I could I wish to suggest you some interesting things or tips. Perhaps you could write next articles referring to this article. I desire to read even more things about it! I saw similar here: Sklep internetowy

اپنا تبصرہ بھیجیں