اربعین ملین مارچ کے بارے میں ہم کیا جانتے ہیں؟

اربعین کی زیارت اسلامی حکومتوں کے مختلف ادوار میں اتار چڑھاؤ کا شکار رہی ہے۔ گذشتہ ایک دہائی کے دوران عراقی اور غیر عراقی زائرین کی تعداد کئی ملین تک پہنچ گئی ہے۔

اہل قبور کی زیارت کرنا اسلام کی ان مذہبی روایات میں سے ایک ہے جہاں لوگ روحانی خلوت حاصل کرنے اور مادی دنیا کے فانی ہونے کو یاد کرنے کے لئے سفر کرتے ہیں۔

ان زیارتوں میں سے ایک زیارت اربعین ہے جو شیعوں کے تیسرے امام امام حسین علیہ السلام کی شہادت کے چالیسویں پر ان کے حرم تک چند کلومیٹر پیدل سفر کی صورت میں منعقد کی جاتی ہے۔

یہ مارچ جو کرڑوں کے اجتماع میں تبدیل ہو چکا ہے آج دنیائے تشیع کے درمیان یکجہتی کی سب سے طاقتور علامت سمجھا جاتا ہے۔ اربعین کے اجتماع میں مسلمانوں کے مختلف گروہ، شیعہ اور سنی حتیٰ کہ عیسائی مذاہب کے لوگ اور مشرق وسطیٰ کے مختلف نسلی گروہوں جیسے یزیدی اور دیگر مذاہب کے پیروکار بھی شرکت کرتے ہیں، جس کی وجہ سے یہ مارچ دنیا کا سب سے بڑا سالانہ مذہبی اجتماع ہے۔

اربعین مارچ کی خصوصیت

اربعین مارچ شیعہ مسلمانوں کی تمام زیارتی رسموں میں ایک الگ خصوصیت رکھتی ہے اور جیسا کہ ذکر کیا گیا ہے کہ دنیا کے مختلف ممالک سے ہر سال صفر کے مہینے کی 7 تاریخ سے 20 تاریخ تک پیدل چلتے ہیں۔ زائرین پہلے نجف شہر میں شیعوں کے پہلے امام حضرت علی علیہ السلام کے حرم پر حاضری دیتے ہیں اور پھر ان کے فرزند امام حسین علیہ السلام کے مزار پر حاضری دیتے ہیں تاکہ کربلا کے اسیروں کے ساتھ ہمدردی کا اظہار کر سکیں۔

کربلا کے تاریخی واقعہ میں یزید کی فوج، اسیروں کو عراق کے صحراؤں سے پھراتے ہوئے شام لے گئی تھی۔

اس روایتی مارچ میں زیادہ تر زائرین نجف سے کربلا جاتے ہیں اور جلوس کے راستے کے ساتھ ساتھ زائرین کے استقبال کے لیے جگہیں بنتی ہیں جنہیں “موکب” کہا جاتا ہے۔ ان موکبوں کا اہتمام مختلف ممالک کے عوام کرتے ہیں۔

اربعین مارچ کا فلسفہ

اس مارچ میں زائرین لمبے لمبے پیدل سفر کے مصائب کو برداشت کرنے کے ذریعے یزیدیوں کی 61 ہجری میں آل رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ غیر مساوی جنگ کے بعد باقی ماندہ اسیروں کی یاد کو تازگی بخشتے ہیں اور ان اسیروں کے مصائب کو یاد کرکے مزاحمت سے سیکھتے ہیں۔

اربعین مارچ کے تاریخی ریکارڈ پر ایک نظر

تاریخی حوالوں سے معلوم ہوتا ہے کہ ائمہ اطہار علیہم السلام کی بارگاہ میں پیدل جانا ائمہ کی زندگی میں عام تھا اور اسلامی سرزمین کے مختلف حصوں میں ہوتا تھا۔ لیکن مختلف اسلامی صدیوں میں سختی اور شیعوں کے اقتدار حاصل کرنے کے خوف کی وجہ سے اسے بہت سے مسائل کا سامنا کرنا پڑا ہے اور جس طرح ائمہ اطہار علیہم السلام کی زیارت کو مختلف اوقات اور مقامات پر بہت سی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا اسی طرح اس روایت میں بھی اتار چڑھاؤ آتے رہے ہیں۔

درحقیقت اربعین کے دن امام حسین علیہ السلام کی زیارت کرنا شیعوں کی متواتر روایات میں سے ہے اور یہ گروہ امویوں اور عباسیوں کے دور میں بھی اس تحریک پر کاربند رہا۔ بلاشبہ ایران میں صفوی حکومت نے پیدل زیارت کے کلچر کو متعارف کرانے میں بھی بڑا کردار ادا کیا۔ اس سلسلے میں منقول ہے کہ شاہ عباس صفوی اور ان کے عہد کے عظیم علماء جیسے شیخ بہائی نے لوگوں میں زیارت کے کلچر کو عام کرنے کے لیے 1009 ہجری میں اصفہان سے مشہد جانے کا فیصلہ کیا اور پیدل چل کر امام علی بن موسیٰ الرضا علیہ السلام کی زیارت کی۔

زائرین پر صدام کا دباؤ

تاہم عراق میں صدام حسین کے برسراقتدار آنے اور اس ملک میں بعث پارٹی کی حکمرانی کے بعد اربعین کی زیارت کے لیے پیدل چلنے اور جانے پر کئی پابندیاں عائد رہیں اور ایسی اطلاعات ہیں کہ حکومتی فورسز نے زائرین پر مظالم ڈھائے جس کے نتیجے میں کئی زائرین شہید ہوگئے۔ تاہم کہا گیا ہے کہ ان پابندیوں کے باوجود بہت سے علمائے کرام نے کربلا کی طرف پیدل چلنا فرض قرار دیا تھا۔

2004 میں شائع ہونے والی “سنوات الجمرات” نامی کتاب میں بعث پارٹی کے دور حکومت میں اربعین کی زیارت کی پابندیوں کے بارے میں کہا گیا ہے: 1397 ہجری میں عراقی بعث پارٹی کا انعقاد کیا گیا۔

1977 میں مذہبی تقریبات اور منظم جلوس اور کربلا کی طرف پیدل چلنے اور اربعین کی زیارت پر پابندی کا ذکر ہے، جب عراقی لوگ زیارت کی تیاری کر رہے تھے، وہ کربلا کی طرف بڑھے، لیکن یہ اقدام صدام حسین کی حکومت کے ہاتھوں ہوا اور بہت سے لوگ مارے گئے اور ایک گروہ کو قید کیا گیا۔ کچھ علماء، جیسے علامہ عسکری اور سید محمد حسین فضل اللہ، جو عراق سے فرار ہو گئے تھے، کو بھی غائبانہ سزائے موت کی سزا سنائی گئی۔

بعث پارٹی کے زوال کے بعد اربعین مارچ کی صورت حال

2003 میں اس ملک پر امریکی حملے کے ساتھ عراقی بعث پارٹی کے زوال کے بعد عراق میں نئی ​​حکومت کے ساتھ اس مارچ کو دوبارہ زندہ کیا گیا اور ہر سال عراقی شیعوں کے علاوہ دیگر ممالک بالخصوص ایران کے شیعہ بھی اربعین مارچ میں شامل ہوتے ہیں۔ اطلاعات کے مطابق اربعین کے جلوس میں شیعوں کے علاوہ سنی، عیسائی، یزیدی اور دیگر مذاہب کے گروہ بھی شرکت کرتے ہیں۔ آج اربعین کے جلوس میں ایران، افغانستان اور افریقی ممالک کے علاوہ سویڈن، ڈنمارک، امریکہ، انگلینڈ، آسٹریا، فن لینڈ، ارجنٹائن، کولمبیا، روس اور آسٹریلیا سے بھی لوگ شرکت کرتے ہیں۔

داعش کے خطرے کے وقت لاکھوں زائرین

1993 سے اب تک ایرانی حکومت کے تعاون سے اربعین کے زائرین کی تعداد 20 ملین تک پہنچ گئی ہے جن میں زیادہ تر غیر ملکی زائرین کی ہیں۔ جبکہ عراقی وزارت داخلہ کے ایک سال پہلے کے اعدادوشمار کے مطابق تقریباً 1.3 ملین غیر ملکی زائرین عراق گئے تھے۔

1994 میں جب کہ خطے کے ممالک میں داعش دہشت گرد گروہ اور دیگر تکفیری گروہوں کا خطرہ محسوس کیا جا رہا تھا، اربعین کے زائرین کی تعداد 22 ملین بتائی گئی تھی، حالانکہ عراقی حکام نے اسی میں زائرین کی تعداد 26 ملین بتائی تھی۔ حالیہ برسوں کے دوران اور کورونا کی صورتحال کے باوجود (گزشتہ دو تین سالوں میں) اربعین زائرین کی اوسط حاضری 12 ملین سے 20 ملین لوگوں کے درمیان بتائی گئی ہے۔

حالیہ برسوں میں زائرین اربعین کے اعداد و شمار
1395 شمسی (2016) میں حضرت عباس علیہ السلام کی تولیتی کمیٹی کے ایک اعلان میں آیا کہ اربعین کے لئے جانے والے دو ہفتوں میں (یعنی 7 صفر سے 20 صفر تک) گیارہ میلین دو لاکھ سے زیادہ لوگ کربلا میں داخل ہوئے۔
2018 (2018) میں امام حسین علیہ السلام کے حرم کی تولیتی کمیٹی نے ایک بیان میں اعلان کیا کہ اربعین تک کے دس دنوں میں (10 سے 20 صفر تک) گیارہ میلین 85 ہزار سے زائد افراد شہر میں داخل ہوئے۔

ایک سال قبل جب کہ کورونا کی صورتحال کم ہو رہی تھی، لیکن دنیا میں اس بیماری کے پھیلاؤ کے اثرات اب بھی موجود تھے، لیکن اس کے باوجود پہلے سال بغیر کورونا پابندیوں کے مارچ کا انعقاد ہوا اور خبر رساں اداروں نے اربعین کے دوران کربلا جانے والے زائرین کی تعداد 21 ملین بتائی گئی۔

3 تبصرے “اربعین ملین مارچ کے بارے میں ہم کیا جانتے ہیں؟

  1. Wow, fantastic weblog structure! How long have you ever been blogging for? you made running a blog look easy. The total glance of your site is great, as well as the content! You can see similar here najlepszy sklep

  2. Wow, marvelous weblog layout! How long have you been running a blog for? you made running a blog look easy. The entire look of your website is magnificent, let alone the content! You can see similar here sklep internetowy

  3. Wow, awesome weblog format! How lengthy have you ever been blogging for? you make blogging look easy. The entire look of your website is great, let alone the content material! You can see similar here ecommerce

اپنا تبصرہ بھیجیں