یہ پچھلے عشق کی باتیں ہیں

یہ پچھلے عشق کی باتیں ہیں
جب آنکھ میں خواب دمکتے تھے

جب دلوں میں داغ چمکتے تھے
جب پلکیں شہر کے رستوں میں

اشکوں کا نور لٹاتی تھیں
جب سانسیں اجلے چہروں کی

تن من میں پھول سجاتی تھیں
جب چاند کی رم جھم کرنوں سے

سوچوں میں بھنور پڑ جاتے تھے
جب ایک تلاطم رہتا تھا

اپنے بے انت خیالوں میں
ہر عہد نبھانے کی قسمیں

خط خون سے لکھنے کی رسمیں
جب عام تھیں ہم دل والوں میں

اب اپنے پھیکے ہونٹوں پر
کچھ جلتے بجھتے لفظوں کے

یاقوت پگھلتے رہتے ہیں
اب اپنی گم سم آنکھوں میں

کچھ دھول ہے بکھری یادوں کی
کچھ گرد آلود سے موسم ہیں

اب دھوپ اگلتی سوچوں میں
کچھ پیماں جلتے رہتے ہیں

اب اپنے ویراں آنگن میں
جتنی صبحوں کی چاندی ہے

جتنی شاموں کا سونا ہے
اس کو خاکستر ہونا ہے

اب یہ باتیں رہنے دیجے
جس عمر میں قصے بنتے تھے

اس عمر کا غم سہنے دیجے
اب اپنی اجڑی آنکھوں میں

جتنی روشن سی راتیں ہیں
اس عمر کی سب سوغاتیں ہیں

جس عمر کے خواب خیال ہوئے
وہ پچھلی عمر تھی بیت گئی

وہ عمر بتائے سال ہوئے
اب اپنی دید کے رستے میں

کچھ رنگ ہے گزرے لمحوں کا
کچھ اشکوں کی باراتیں ہیں

کچھ بھولے بسرے چہرے ہیں
کچھ یادوں کی برساتیں ہیں

یہ پچھلے عشق کی باتیں ہیں

محسن نقوی

یہ پچھلے عشق کی باتیں ہیں” ایک تبصرہ

  1. I see You’re really a good webmaster. This website loading velocity is incredible. It kind of feels that you’re doing any distinctive trick. Furthermore, the contents are masterpiece. you’ve performed a wonderful activity in this matter! Similar here: najtańszy sklep and also here: Tani sklep

اپنا تبصرہ بھیجیں